<Previous      Next>
Gualib - An Elegy


When naught was there the Lord hast been,
hath naught been there the Lord hath been,
Hast shattered me the matter of being,
hath I been naught then what hath been?

When so impervious to grief hath I become
then wherefore grieve in guillotined being?
If hast it not beheaded been
then plainly upon breast hath been!

And ages hence hast Gualib d'ceased,
but heart ever yearns to hearken
On aught his skeptic utterance
“Hath this been thus then what hast been?”


An Urdu Ghazal


نہ تھا کچھ تو خدا تھا کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈبویا مجھ کو ہونے نے نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

ہوا حب غم سے یوں بے حس تو غم کیا سر کے کٹنے کا
نہ ہوتا گر جدا تن سے تو زانوں پر دھرا ہوتا

‎‌ہو ئي مدّت کہ غالب مر گیا پر یاد آتا ہے
وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا